تازہ ترین
بنیادی صفحہ » ایکسکلوسوز » صادق امین کی پٹائی در پٹائی اور انٹیلی جنس ویڈیو کی کہانی

صادق امین کی پٹائی در پٹائی اور انٹیلی جنس ویڈیو کی کہانی

صادق امین کی پٹائی در پٹائی اور انٹیلی جنس ویڈیو کی کہانی

مراد سعید جس کی پہچان ہو، شہباز گل جس کا ترجمان ہو، بشریٰ بیگم پر جس کا ایمان ہو ، جس کاوکیل فیاض الحسن چوہان ہو ، جس کیلئے چیزیں سستی کرنا مشکل اور مہنگی کرنا آسان ہو، جس کی نظر میں عوام کی سکون کی جگہ صرف قبرستان ہو اورخود قبر میں جانے سے پریشان ہو، جس کانہ وعدہ نہ کوئی زبان ہو ، جس کے میراثی کامران اور اینکر عمران خان ہوںاور عوام جس کے متعلق یک زبان ہو، جس کا کرتا دھرتاپرسنل سیکرٹری اعظم خان ہو،یہ خود ساختہ صاحب ایمان ہو اور اسکے ہاتھ میں پاکستان ہو ،جہاں گندم اپنی لیکن آٹے کا بحران ہو تو آپ کے دل میں جو جی آئے کہیں لیکن یہ یاد رکھیں ایسے شخص کو سابق چیف جسٹس ثاقب نثار کی زبان میں صادق امین جبکہ یوتھیو کا”کپ تان”کہتے ہیں ۔ایک ایسا شخص جو اپنے ماضی کے بیانیے کے مطابق چور، ڈاکو ، مافیا اور نہ جانے کس کس بدبخت کی تعریف پر خود پورا اترتاہے جس کے متعلق صادق وامین، ایماندار سمیت بنائے گئے تمام بیانیے اب دفن ہو چکے ہیں۔ یہ سب آپ کو معلوم ہے اس لیے اس کی تفصیل میں میں نہیں جانا چاہتا۔ اب یہ سوال نہیں کہ وہ صادق وامین ہے یا نہیں،سوال یہ ہے کہ اسے صادق امین بنا کر کیوں پیش کیا گیا ؟جیسا کہ آپ جانتے ہیں کہ لوگ جھوٹے خدااور جھوٹے نبی توبناتے رہے ہیں لیکن ان جھوٹے خدائوں اور نبیوں کا جو عبرت ناک حشر ہوا وہ دنیا جانتی ہے۔ آج کل کچھ اس طرح کی صورتحال پاکستان میں بھی بناوٹی صادق و امین کے ساتھ چل رہی ہے ۔

یہ بھی پڑھیں: کیا سب مسلمان کافر ،ہم سمجھ دار یا سمجھ سے دور؟

قارئین! ججوں کے ہاتھوں سسیلین مافیا قرار دیے جانے والے نواز شریف نے اپنی وزیر صحت سائرہ افضل تارڑکی طرف سے یک مشت تمام ادویات کی قیمتوں میں 15فیصد اضافہ کرنے پر نہ صرف ایک ہی دن میں یہ فیصلہ واپس لیابلکہ سائرہ افضل تارڑ سے بول چال بھی بند کر دی ۔ سابق آمر جنرل پرویز مشرف بھی کھانے پینے کی اشیاء کی قیمتوں میں اضافے کے حوالے سے غریب آدمی کی بد دعائوں سے ڈرتے تھے، ہماری ملاقات جب ان کے وزیر خزانہ شوکت عزیز سے ہوتی تھی تووہ کہتے تھے کہ فوڈ آئٹمز کی قیمتوں کے حوالے سے صدر پرویز مشرف کی سخت ہدایات ہیںلیکن اعلیٰ عدلیہ کے سابق اعلیٰ ترین جج بابا رحمتے کے ہاتھوں بنایا گیا صادق وامین مسلسل قوم کیلئے زحمت کا سبب بن رہا ہے۔ اس کے دور میں اس کے وزیر صحت عامر کیانی نے ادویات کی قیمتوں میں یک دم تین سو فیصد اضافہ کیا ۔جس کے بعد ایک انٹیلی جنس ایجنسی نے انکے وزیر”باکمال ”کی سیرینا ہوٹل میں ادویہ ساز کمپنیوں سے نوٹوں سے بھرے لفافے لینے اوردبئی میںپی ٹی آئی کے ایک اہم رہنما کے ہمراہ انہی کمپنیوںکے عہدیداروں کے ساتھ ملاقات کی تصاویر اور ویڈیوز وزیراعظم کودیں تو مذکورہ وزیر کو عہدے سے ہٹا دیا گیا لیکن جب اس نے وزیر اعظم کے کزن اور ہیلتھ ٹاسک فورس کے چیئرمین نوشیروان عادل برکی کے اس سکینڈل میں مرکزی کردار ہونے کے حوالے سے گفتگو نجی محفلوں میں شروع کر دی کہ وزیر اعظم نے مجھے تو قربانی کا بکرا بنا دیا ہے لیکن ادویات کی قیمتوں میں اضافے کا فیصلہ واپس نہیں لیا یہ اس بات کا واضح ثبوت ہے کہ قیمتوں میں اضافے کا بینفیشری اور ضامن اس سسٹم میں موجود ہے ۔ اس حوالے سے رپورٹس ملنے پر وزیر اعظم نے انہیں پاکستان تحریک انصاف کا سیکرٹری جنرل بنا دیا ۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ عامر کیانی کے وزارت سے ہٹنے کے بعد بھی اب تک کئی مرتبہ ادویات کی قیمتوں میں اضافہ ہو چکا ہے لیکن ایماندار حکومت کے صادق وامین سربراہ کے کانوں پر جوں تک نہیں رینگی اوراب رینگنی بھی نہیں ہے۔چینی سکینڈل ،آٹا سکینڈل، گیس بجلی سکینڈل سمیت ہر سکینڈل کا کھرا نام نہاد صادق امین تک جاتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: کسی وقت بھی ختم ہوسکتی ہے؟

کہتے تھے کہ یہ عوام کیلئے ایک تحفہ ہے جب یہ اقتدار میں آیا تو لوگ نواز شریف اور زرداری کو ہمیشہ بھول جائیںگے، اس” تحفے”نے مہنگائی، بیروزگاری کی شکل میں عوام کو اتنے تحفے دیے ہیں کہ لوگ واقعی ہی نواز شریف اور زرداری کو بھول گئے ہیں۔اس نے مثل”چور مچائے اتنا شورکہ خود نہ لگے چور”صرف اس کام کیلئے سو سے زیاد ہ وزیر ، مشیر اور ترجمان رکھے ہوئے ہیں لیکن عوام اس کے متعلق اب یک زبان ہیں ۔سینئر ترین صحافی محسن رضا خان صاحب کہتے ہیں کہ بچپن میں پی ٹی وی ڈرامہ دیکھتا تھا اب پی ٹی آئی ڈرامہ دیکھتا ہوں۔

یہ بھی پڑھیں: جنرل نیازی کے بعد اِک اور نیازی بہت دیر یاد رہے گا

اس نے اپنے دور میں پاکستانیوں کو اندرونی سطح پر کمزور اور بیرونی سطح پر شرمندگی کے سوا کچھ نہیں دیالیکن پاکستان کے نام پر یا پاکستانی وزیراعظم ہونے کے باعث اسے دیگر ممالک کے سربراہان مملکت سے جو تحائف ملے ہیں وہ پاکستانی عوام سے ہی چھپاتا ہے۔خود تسلیم کرتاہے کہ اس نے تحائف کل قیمت کا پچاس فیصد ادا کر کے توشہ خانہ سے حاصل کیے ہیں،اسے خود یہ تسلیم کر کے شرمندگی محسوس نہیں ہوتی کہ تحائف کی ساری قیمت ادا کرنے کے بجائے صرف آدھی قیمت پر انہیں اس نے توشہ خانے سے حاصل کیاہے۔اس پرنامور شاعرانور مقصود کہتے ہیں کہ سعودی شہزادے محمد بن سلمان نے عمران خان کوتحفے میں گھڑی دی ہی” اوقات دیکھنے کیلئے” تھی۔ کہتا تھا کہ میرے پاس سب مسائل کا حل موجود ہے ،تمام دنیا کو سب سے بہتر جانتا ہوں لیکن وقت نے یہ ثابت کیا ہے کہ یہ عمران عمرانیات(سماجیات)سے بھی مکمل طور پر بھی نابلد ہے۔ کرکٹ کا ہیرو سیاست میں زیرو ہو چکا ہے لیکن اب بھی اسے اس خوش فہمی میں رکھا جا رہا ہے کہ اسے الیکٹرانک ووٹنگ مشینوں کے ذریعے اگلے پانچ سال بھی اقتدار میں توسیع دی جائیگی۔ پاکستان میں یہ المیہ ہے کہ یہاں تقریبا ہر ادارے کا سربراہ اپنی سروس میں مرنے تک کی توسیع چاہتا ہے۔ اگر آپ تاریخ کا مطالعہ کریں تو پاکستانی قوم کی موجودہ مشکلات پاکستان بننے سے اب تک توسیع زدہ اور” توسیع زدگی”میں ملوث افراد کے اردگرد گھومتی نظر آئیں گی۔اگلے پانچ سال بغیر کوئی کام کیے اقتدار میں رہنے کی پلاننگ پر بس اتنا کہوں گا۔

”Man Proposes God Disposes”

x

Check Also

تھانہ شہزاد ٹاؤن کی حدود میں ڈاکوؤں کی فائرنگ سے شہری زخمی، پولیس کا مقدمہ درج کرنے سے انکار

تھانہ شہزاد ٹاؤن کی حدود میں ڈاکوؤں کی فائرنگ سے شہری زخمی، پولیس کا مقدمہ درج کرنے سے انکار

تھانہ شہزاد ٹاؤن کی حدود میں ڈاکوؤں کی فائرنگ سے شہری زخمی، پولیس کا مقدمہ درج کرنے سے انکار