تازہ ترین
بنیادی صفحہ » ایکسکلوسوز » پاکستان کیخلاف منفی پراپیگنڈہ روکنے،مثبت امیج اجاگر کرنیوالا انفارمیشن گروپ افرادی بحران کا شکار، ساٹھ افسران کی کمی

پاکستان کیخلاف منفی پراپیگنڈہ روکنے،مثبت امیج اجاگر کرنیوالا انفارمیشن گروپ افرادی بحران کا شکار، ساٹھ افسران کی کمی

خصوصی رپورٹ:سید تبسم عباس شاہ

ملک کے مثبت امیج کو اجاگر اور اینٹی پاکستان پر اپیگنڈے کے اثر کو زائل کرنے کیلئے قائم کیا گیا انفارمیشن گروپ افرادی بحران کا شکار ہے اور اسے اسوقت 60افسران کی کمی سامنا کرنا پڑرہا ہے ۔ماہرین نے پرنٹ، الیکٹرانک کے بعدڈیجیٹل میڈیا آنے کے بعداورملک کو درپیش ففتھ جنریشن وار کے خطرات کے تناظر میں انفارمیشن کی افرادی قوت میں دورجدید کے تقاضوں کے مطابق اضافہ کرنے کے لیے باضابطہ جائزہ لینے کی تجویز دی ہے۔ اسٹیبلسمنٹ ڈویژن کی ایک دستاویز کے مطابق 2012 میں آخری مرتبہ انفارمیشن گروپ کے افسران کی تعداد میں اضافے کی منظوری دیتے ہوئے اس کی تعداد 298کی گئی تھی۔ ڈیجیٹل میڈیا آنے کے بعداورملک کو درپیش ففتھ جنریشن وار کے خطرات کے باوجود اس کے افسران کی پوسٹوں میں اضافہ نہیں کیاگیا۔دلچسپ امر یہ ہے کہ عملی طورپر اس وقت انفارمیشن گروپ کے 239افسران کام کررہے ہیں۔ اس وقت گریڈ 17کے انفارمیشن گروپ افسران کی منظورشدہ تعداد 138کے مقابلے میںعملی طور پر 78ہے گریڈ18میں افسران 91، گریڈ 19کی 51افسران کی منظور شدہ تعداد کے مقابلے میں 45افسران ،گریڈ 20کے افسران کی منظور شدہ تعداد 23کے مقابلے میں 18اور گریڈ 21کے افسران 7پوسٹوں کے مقابلے میں 6افسران کام کررہے ہیں ۔جن میں سے ناصر جمال 16فروری سے ریٹائرڈ ہوچکے ہیں۔ صدرپاکستان کے پریس سیکرٹری طاہر خوشنود رواں سال کے آخری مہینے ، انفارمیشن سروس کی ڈائر یکٹر جنرل ثمینہ وقاراور موجود ہ پرنسپل انفارمیشن افسر میاں جہا نگیر اقبال اگلے سال جنوری میں جبکہ ڈائر یکٹر جنرل ایکسٹرنل پبلسٹی ونگ ظہور احمد برلاس اگلے سال 2021کے پہلے مہینے میں ریٹائرڈ ہوجائیں گے ۔گریڈ اکیس سے کچھ روزقبل ریٹا ئرڈ ہونے والے ناصر جمال کو اس گروپ کے بد ترین افسرکے طورپر یاد کیا جائیگا ۔کیونکہ انہوں نے اپنے کئی ماتحت افسران کا کیرئیر تباہ کرنے کی کوشش کی ۔ میڈ یا کے حوالے سے متنازعہ ڈرافٹ تیار کرنے کے نتیجے میں انہیں وزات اطلاعات سے نکال دیا گیا ۔وہ کافی عرصے تک وزارت اطلاعات کے ڈائریکٹر جنرل اورمنیجنگ ڈائر یکٹر شالیمارریکارڈ نگ اینڈ براڈ کاسٹنگ کمپنی بیک وقت دوعہدوںکیتنخواہ غیرقانونی طور پر وصول کرنے میں کامیاب رہے۔اس لیے ان کے خلاف کسی وقت غیرقانونی طور پر لی گئی دو دو تنخواہوں کا کیس کھل سکتا ہے۔نواز شریف دورحکومت میں وزیراعظم کے پریس سیکرٹری کی انفارمیشن گروپ کی گریڈ اکیس کی سیٹ پر پاکستان ایڈ منسٹر یٹو سروس کے افسر محی الدین کو لگایا گیا۔ موجود ہ حکومت نے اس پوسٹ پرابھی تک کسی بھی افسر کو نہیں لگایا۔ وزیراعظم کے پر یس سیکرٹری کی یہ انتہائی اہم سیٹ گذشتہ 6ماہ سے خالی ہے۔ گزشتہ حکومت نے کچھ پسند ید ہ افراد کو نواز نے کے لیے لند ن میں انفارمیشن گروپ کی گریڈ 20،ماسکو ، جرمنی ، امریکہ کی گریڈ 19اور ہانگ کانگ ، انقرہ پرانفارمیشن گروپ کی سیٹوںپر پوسٹنگ کے لیے متنازعہ پالیسی اپنائی۔ جس کیخلاف عدالتوں میںاب تک مقدمات چل رہے ہیں ۔جس کی وجہ ان شہروں میں یا تو کوئی اپنا افسر بھجوایا ہی نہیںگیا یا گزشتہ دس سال سے وہاں پر تعینات افسران ہی کام کررہے ہیں۔ ڈیجیٹل میڈ یا آنے کے بعد انفارمیشن گروپ کے افسران کی تعداد کو کئی گنا بڑھانے کی ضرورت ہے۔ خصوصاً اب جبکہ ففتھ جنریشن وار کی باتیں چل رہی ہیں تواس صورت میں اس کی ضرورت مزید بڑھ گئی ۔ کم افرادی قوت کی وجہ سے ڈ یجیٹل میڈ یا پر کوئی خاص توجہ نہیں دی جارہی ۔ جس کی وجہ سے ملک میں نت نئے فتنے جنم لے رہے ہیں ۔ ماہرین کے مطابق اگر انفارمیشن گروپ کو مطلوبہ افرادی قوت مل جاتی ہے تو پاکستان اور اسلام کے خلاف کام کرنیوالوںکو بری طر ح شکست ہوگی ۔ اس حوالے سے وزیراعظم ، صدرپاکستان کو خصوصی دلچسپی لینی چاہیے اورمناسب اقدامات کرنے چاہیں ۔گریڈاکیس کی سنیارٹی لسٹ میں پہلے نمبر پر آنیوالی زاہد ہ پروین جوکہ اس وقت ایڈیشنل سیکرٹری اطلاعات کے طور پر کام کررہی ہیں۔ان کا شمار دیانت دار ترین افسران میں ہوتا ہے، انکے متعلق مشہور ہے کہ جائزکام کسی کاروکتی نہیں اورغلط کام کسی کا کرتی نہیں ہیں۔ دیگر افسران میں طاہر خوشنود میڈ یا سے تعلقات کے حوالے سے نمبر ون پوزیشن رکھتے ہیں، ظہور احمد برلاس اور ثمینہ وقار کابھی میڈ یا میں اپنااپنا حلقہ اثر ہے جو انھوں مختلف پوسٹنگز کے دوران بنایا ہے۔میا ں جہانگیر اقبال کا بطور پر نسل انفارمیشن افسر اس وقت سخت امتحان جاری ہے ،موجود ہ حالات میں حکومت کے میڈ یا کے ساتھ تعلقات کو بہتر بنا نا ان کے لیے بڑا چیلنج ہے ۔ اس کیلئے وہ بھر پور تگ ودو میں مصروف ہیں۔ موجودہ وفاقی سیکرٹری اطلاعات شفقت جلیل ذاتی پسند نا پسند کی بجائے رولز آف بزنس کے مطابق فرائض سرانجام دینے کے حوالے سے مشہور ہیں اور اینٹی میڈ یا ذہنیت کے افسران کی راہ میں سب سے بڑی رکاوٹ ہیں، دفتر میں آنے والے ہر شخص سے ملتے ہیںاور اسکا جائز مسئلہ اسی وقت حل کرنے کی کوشش کرتے ہیں ۔ حال ہی گریڈ اکیس میں ترقی پانے والے سعید جاوید خو شگوار شخصیت کے مالک ہیں انکے بھی میڈ یا کے ساتھ گہرے مراسم ہیں۔ گر یڈ بیس کے افسران میں نو ید اقبال جوائنٹ سیکرٹری ، سکندر شاہ ڈائریکٹر جنرل پی آر کراچی اور ڈاکٹر نجیب رواں سال جبکہ نائیلہ مقصود پر یس رجسٹرار اور ڈاکٹر نظا م الدین میمن اگلے سال ریٹا ئر ڈ ہو جائینگے ، گریڈ 20میںثر یا جمال سینا رٹی لسٹ میں سب سے سنیئر ہیں ، دیگر افسران میں سہیل علی خاں ڈائر یکٹر جنرل انٹر نل پبلسٹی ڈی جی پی آر لاہور، اے پی پی، سابق صدر پر ویز مشرف کے ساتھ بطور ڈائر یکٹر سمیت اہم عہد وں پر خدمات انجام دینے کاتجربہ رکھتے ہیں۔ اختر منیر ڈائر یکٹر جنرل سائبرونگ حال ہی افغانستان میں انتہائی مشکل پوسٹنگ گزار کر آئے ہیں ، جہاں انہیں بھارت ، افغانستان سمیت پاکستان دشمن قوتوں کے پاکستان کے حوالے سے انتہائی منفی پرا پیگنڈ ے کے اثرات زائل کرنے کے حوالے سخت محنت کرنا پڑی ۔ گریڈ بیس کے ایک اورافسرسیدمبشر توقیر اورارشدمنیربھی صحافیوں کی گڈ بک میں ہیں ۔ ڈائر یکٹر جنرل DEMP طاہر حسن نے سیکرٹری اطلاعات خیبر پختونخواہ ، ڈائر یکٹر جنرل پی آر لاہور سمیت عہدوں پر کام کیا ہے۔ اس دوران انہوں نے بہت عزت اور محبت کمائی ہے ۔ان کے میڈ یا مالکان ، ایڈ یٹر ز ، رپورٹر ز اور صحافی یونین رہنمائوں کیساتھ یکساں گہرے مراسم ہیں۔ انفارمیشن گروپ گریڈ 20کے دیگر افسران طار ق محمود اور امبرین خان کے بھی میڈ یا سے گہر ے روابط ہیں گریڈ 19کے انفارمیشنگروپ افسران میں ند یم کیانی ، منظور میمن، عاصم کھچی، کا کا شف زمان ، شفقت عباس ، محمد سلیم ، دانیال سلیم گیلانی ، دائود احشام ، سرفراز حسین میڈیا دوست کے طورمشہور ہیں یہ افسران میڈیا اور میڈیا ایشو ز کو اچھی طر ح جانتے ہیں۔ڈپٹی سیکرٹری وزارت اطلاعات مستعین علوی گو سیکرٹریٹ گروپ سے تعلق رکھتے ہیںلیکن وزارت اطلاعات میں مسلسل تعیناتی کے باعث انکے صحافیوں اورمیڈ یا ورکرز سے ان کے یکساں روابط ہیں۔انتہائی منکسر المزاج افسر کے طورپر مشہور ہیں۔ گریڈ 18کے افسران میں علی نواز ملک ، فیصح اللہ ، فرخ رفیق ، عامر رضا، شاہد عمران رانجھا ،صغیرانوروٹو، انتصار سلہری، علی شہزاد، مظہر حسین ،آصف رضا شاہ اور گریڈسترہ کے افسرحر عرفان، ساجد حسین شاہ نے بطور پی آر او مختلف وزارتوں میں کام کرتے ہوئے میڈیا کے ساتھ بہترین تعلقات بنائے ہیں ۔ پی آئی ڈی کے سنیئر پر ایئویٹ سیکرٹری نعیم شاہ گر یڈ 19،انفارمیشن گروپ سے نہیں ہیں لیکن میڈیا مالکان ، ایڈ یٹر ز، رپورٹر ، نیوز ایڈ یٹر ، سب ایڈ یٹرز

سب انھیں جانتے ہیں اور ان کے ساتھ انتہائی دوستانہ تعلقات رکھتے ہیں ۔ انفارمیشن گروپ سے باہر نیشنل بنک کے تر جمان سید ابن حسن ، اوجی ڈی سی ایل کے عرفان بابر ، سکندر علی شیخ اور آئیسکو کے محمد عاصم میڈ یا دوستی کے حوالے سے پورے ملک میں مشہور ہیں ۔ان کے بھی میڈ یا مالکان ، ایڈ یٹرز ، رپورٹرزاور صحافی یونینز رہنمائوں کیساتھ بھی گہرے روابط ہیں ۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*

x

Check Also

تھانہ شہزاد ٹاؤن کی حدود میں ڈاکوؤں کی فائرنگ سے شہری زخمی، پولیس کا مقدمہ درج کرنے سے انکار

تھانہ شہزاد ٹاؤن کی حدود میں ڈاکوؤں کی فائرنگ سے شہری زخمی، پولیس کا مقدمہ درج کرنے سے انکار

تھانہ شہزاد ٹاؤن کی حدود میں ڈاکوؤں کی فائرنگ سے شہری زخمی، پولیس کا مقدمہ درج کرنے سے انکار